Monday, May 17, 2010

باتیں جامعہ کراچی کی


قصہ کچھ یوں ہے کہ . سن 1993 کا ماہ نومبر تھا کہ جب ہم نے جامعہ کراچی کے چکر لگانا شروع کیے اور 1994 کے ماہ جنوری میں ہم شعبہ ریاضی میں سال اول کے طالب علم کا درجہ حاصل کر سکے، اس وقت مقصد عزت کی ایک ڈگری کا حصول تھا کہ گیان و دھیان کی شہر کی سب سے بڑی سرکاری درسگاہ ہماری یہی مادر علمی تھی. سال اول میں ہم نے ریاضی، اضافی ریاضی اور طبیعات کے سائنسی مضامین پڑھے جن میں سے طبیعات میں دونوں سمسٹرز میں امتیازی نمبر حاصل کیے جو کہ 70 فیصد بنتے تھے. اس کارن ہم اپنا تبادلہ شعبہ طبیعات میں کرا پاے. تقدیر میں طبیعات کا استاد اور محقق بننا لکھا تھا. یوں ہم نے بقیہ 3 سال طبیعات ایک اہم مضمون کے طور پر پڑھا.
سال اول میں ہم نے اپنے طور پر ہی پڑھنے کی کوشش کی مگر جلد ہی اندازہ ہو گیا کہ جامعہ میں رہن سہن کا انداز جداگانہ ہے تو گروپ بنا کر پڑھنے لگے. ہم کوئی پوزیشن ہولڈر قسم کے طالب علم نہ تھے مگر اتنا ضرور تھا کہ اساتذہ کی نظرمیں رہتے تھے خاص طور پر طبیعات میں تو مشہور تھے کہ ہم تبادلہ کرا کر آۓ تھے.
جامعہ کراچی میں ایک خاص قسم کا ماحول ہے اور آپ کو اس کے مطابق ہی چلنا پڑتا ہے. مثلا پوائنٹ میں آنا جانا، سلور جوبلی سے ڈیپارٹ تک پیدل چلنا، بارش میں دو دو بار آئس کریم کھانا. لائبریری کے لان میں دیر تک بیٹھنا، پی جی میں کباب رول کھانا، مجیدے کے ہوٹل سے انڈہ گھوٹالا کھانا اور تین تین بار گریبی مانگنا، پوائنٹ میں جلدی جاکر جگہ گھیرنے کیلیے سیٹ پر پتھر رکھ آنا. کمبائنڈ یعنی گروپ اسٹڈی کرنا وغیرہ وغیرہ. آج ہم جب اپنے چند شاگردوں سے سنتے ہیں کہ وہ جامعہ میں خود کو مکمل طور پر ماحول کے مطابق نہیں ڈھال پاے تو وہ ہمیں کسی دوسرے سیارے کی مخلوق لگتے ہیں. کچھ بھی ہو جامعہ کا ماحول گزشتہ 16 سالوں سے تو ہم نے ایسا ہی دیکھا ہے، سنا ہے کہ اب امتحان کا طریقہ کار کچھ بدل گیا ہے اور سمسٹر سسٹم باقاعدہ رائج کردیا گیا ہے جو کہ سالانہ سے زیادہ آسان مانا جاتا ہے یہ اور بات کہ طلبہ ہر وقت حالتِ امتحان میں رہتے ہیں مگر ہمارے تجربہ کے مطابق جامعہ کراچی میں پڑھنا آج بھی نہایت آسان ہے.
اگر آپ شروع سے ٹیچر کے ساتھ ساتھ تمام لیکچر دوہراتے رہیں یا کم از کم روز کا روز پڑھ لیں تو آخر میں دقت نہیں ہوتی. (بلا گ پر امید ہے کہ ہمارے شاگرد ضرور آرا دیں گے کہ سر آپ کو نہیں پتہ کہ کتنا مشکل ہے اب پڑھنا) تو ہم پہلے ہی مانے لیتے ہیں کہ ہاں بہت مشکل ہے آج کل پڑھنا، کیونکہ ہم نے جب پڑھا تھا تو موبائل اور انٹرنیٹ اس قدر بچہ بچہ کی رسائی میں نہ تھے اور خاصا وقت نکل آتا تھا، اور تو اور اس دور میں ہم نے طلبہ و طالبات کو ٹیوشن بھی پڑھاتے دیکھا. ہم خود بھی شام کو کوچنگ میں پڑھاتے تھے. یہ شغل تو آج بھی بہت سے طلبہ کرتے دکھائی دیتے ہیں.
امتحان کے دنوں میں جب پرچوں میں گیپ ملتا تو رات رات بھر ایک دوسرے کے ہاں رک کر پڑھتے تھے اور چاے پراٹھوں کا دور چلتا تھا، بلکہ شاہ رخ خان اور کاجل کی 'دل والے دلہنیا لے جائیں گے' بھی ہم نے امتحانوں کے گیپ کے دوران ایک دوست کے گھر دیکھی تھی. مقصد یہ سب بیان کرنے کا یہ ہے کہ جو لوگ امتحانوں کو اپنے اوپر طاری کر لیتے ہیں اور بیمار پڑ جاتے ہیں یا کمرہ امتحان میں گم سم ہو جاتے ہیں انھیں چاہیے کہ پر سکون رہ کر پرچوں کی تیاری کریں. اس دور میں ہم ایف ایم بھی سنا کرتے تھے اور کافی اشعار رات 12 سے 4 کے غزل رنگ پروگرام سے سن کر یاد کیے تھے.
ہمیں ان تمام طالب علموں پر بھی ہنسی آتی تھی جو عین امتحان کے روز نوٹس اور لیکچر لے کر کمرہ امتحان کے سامنے بلکہ اندر بھی پڑھ رہے ہوتے تھے یہاں تک کہ جب تک امتحانی پرچہ تقسیم نہ کر دیا جاتا ان کے نوٹس نظروں سے نہ ہٹتے. اس قسم کی 'ساڑھے گیارہ بجے والی' پڑھائی ہماری سمجھ سے بالاتر تھی. ہمیں یقین ہے کہ ایسی قوم جامعہ میں ہر دور میں رہی ہے. اس قسم میں لڑکیوں کی تعداد خاصی دیکھنے میں آتی ہے ویسے بھی اب جامعہ کراچی جامعہ زنانہ بن چکی ہے.
اس بلاگ کا اختتام ہم سینیٹر جاوید جبّار کے الفاظ پر کرتے ہیں جو انہوں نے 1998 میں جامعہ کراچی میں ایک تقریب کے موقع پر کہے تھے 'ہم یہ نہیں کہتے کہ جامعہ کراچی، کراچی میں ہے بلکہ کراچی، جامعہ کراچی میں ہے'

21 comments:

  1. I should add my experience......but dont have words and time to write like you... just wanted to share that there were a few exams (in my student life) that i got the copies of the notes after Maghrib.....studied them far after Isha and slept far before Fajar....
    and the result.... 70% +
    some of my fellows still dont believe it...and they say that i cheated in the exams. :)

    ReplyDelete
  2. Well brother I know that very well ;)

    ReplyDelete
  3. intresting sir and things havn't changed during the years!
    what abt pg k samosa and party clashes???

    ReplyDelete
  4. PG kay samosay are too gud and party clashes are too bad; U know we order these SOMASAS from our office too ;)

    ReplyDelete
  5. sir pg k barain main tohraa detail jatay too bann lag jata appp par hehhe,, very intresting,,,ohsum

    ReplyDelete
  6. hmm, PG ki detail bhi likh dain gay aur BAN say dernay waley aey asman nahi hum, samjhin Ms, Urooj Nasim (apna naam to likh detien aap)

    ReplyDelete
  7. aaj bhi waqai ku aisa hi hai aur parhna bhi bohat hi assan hai mera to paperz hain aur main net par masroof-e-amal hun. ku main waqai girlz bohat ziada hoti ja rahi hain har taraf bas larkiyan hi milti hain. khai kafi mazedaar life hai ku ki mera to abhi start hai agay agay dekhye hota hai kia................

    ReplyDelete
  8. Is this Aisha Tufail? Are of yu are requested to leave write your name with the comment please if you are commenting as Anonymous.

    ReplyDelete
  9. Wonderful Ayaz, this has reminded me of great golden days tough YAAD-e-MAAZI AZAB HAI YARAB....now life is all about busy schedules...those days we had great time to party around....anyways i am loving your write up....
    Adnan A. Siddiqui

    ReplyDelete
  10. Thanks for your encouraging comment Adnan. Yeah, this particularly goes to all my fellows of that time and you are one of them :)

    ReplyDelete
  11. SYED MAZHER ALEEMMay 18, 2010 at 5:35 AM

    SHANDAR AYAZ,
    ITS REALLY NICE TO REMIND THOSE DAYS
    I REALLY MISS IT
    THANKS FOR REMIND THEM

    ReplyDelete
  12. NICE!PG ki Tafseel k saath THANDI SARAK ka bhi haal bayan karden.;)

    ReplyDelete
  13. Interesting!! but why only student life??? There should be an article about GREAT TEACHERS of UoK. The Science they play while teaching Arts subject or the Politics they use in Science Departments.

    Hojaiye Sir aik article :)

    ReplyDelete
  14. Nice Sir
    But i would say that now every university in Pak have some sort of similar stories ;) Lolz

    ReplyDelete
  15. its nice sir...when i was in ku it was same as u have written regarding exams schedule..han kabhi koi teacher midterm le letay thay....now BS program ki waja se ma b kafi changes aagaye hun...but it was nice n enjoyable studying in ku nice experience..
    1 more thing i wanna add..now its look odd when v c boys in arts department..i mean according to me they shud join sum professional field instead of urdu history n etc department.
    n i like point wali baat...but ab koi phatar nae balkay empty bags rakh ker seat reserve kerte hain bcoz nowadayz koi notebook b nae chorta money tou dour ki baat hai:)
    diya

    ReplyDelete
  16. Thanks Mazher, Danyal, Romasa, Saqib and Madiha for reading and commenting.
    Thanks for adding the points too.

    ReplyDelete
  17. Maine yeh blog aaj hi parha hai Sir aap nay bohat khoobsoorti say Jaamia Karachi ka naqsha kheencha hai laiken aap aik important cheez miss kar gaye...
    Chemistry ki chaat aur Juice Centre...
    Points k andar tu yeh chalta hi rehta hai abhi tak balkay poora maahol wesay ka wesa hi hai jo aap nay bayaan kia hai..
    Wesay Sir aap ko (As a teacher) bhi apnay Jaamiya mai guzaaray hue waaqiyat k baaray mai likhna chahiye...:)

    ReplyDelete
  18. zabaaaaaaaar daaaaaaaaaaaaaas sir


    wasay yeh sahe hai rooz ka rooz parhanay wala pareshan nahe rehtaa


    urooj nasim

    ReplyDelete
  19. I disagree about studying daily and cope up with the teacher, as I never did that ;-) who else knows better than U teaching eachother... I have always studied during the exams gap (Akhri waqt main hi musalmaan huay hameysha) ... I agree with the fact that we were in the attention of the impressive teachers!!! What so ever I strongly believe that life@KU will never change ... anyone who has passed out will always see his image in the years ahead Haaah!!!

    ReplyDelete
  20. very interesting sir, things havn't changed during years, except that now we have seven courses per semester :)

    ReplyDelete
  21. Inne parhako thy sir aap=D

    ReplyDelete