Tuesday, September 14, 2010

تصویرِہمدرداں- جب بہار آئی تو۔۔۔۔

ایک تقریب جو ہر سال کالج کےطالبِعلموں کیلئے منعقد کی جاتی رہی، جشنِ بہاراں ، بسنت میلہ یا پتنگ اڑانے کامقابلہ تھی۔ اس سلسلے کا آغاز سن دو ہزار میں کیا گیا اور اس کی بنیاد ڈالنے والوں میں محترم سجاد صاحب کا نام لیا جا سکتا ہے، اسوقت سے یہ میلہ کم و بیش ہر سال فروری/مارچ میں منعقد ہوتا چلا آرہا ہے۔ اسکی سب سے منفرد بات وہ پتنگ ہے جو صالح جتوئی ایک روز قبل ہی چمکدار پٹیوں ، رنگ برنگی ڈوریوں اور غباروں سے بلاول اسٹیڈیم کی سیڑھیوں پر تخلیق دیا کرتے تھے۔ اس تقریب کی  اصل رونق اسی پتنگ کے دم سے ہوتی تھی۔ اولین پتنگ جب بنی تو ہم بھی صالح جتوئی کی مدد کو موجود تھے، یوں ہمارا نام بھی شہیدوں میں لیا جا سکتا ہے۔
سن دو ہزار میں جشنِ بہاراں کے موقع پرطلبہ کا تیسرا جتھا یعنی بیچ تھا جس نے   اس تقریب کا انعقاد  پہلی بار دیکھا،اس کا افتتاح مسز گلزار نے پتنگ اڑا کر کیا اور ان کی معاونت کنور سارم حسین اور جویریہ بدّر نے کی۔ اسکے بعد یہ سلسلہ چل نکلا اور ہر سال ہی رنگین پتنگوں اور آنچلوں کی بہار بلاول اسٹیڈیم میں قوس قزہ کی صورت اُترا کرتی۔ وقت کے ساتھ ساتھ اس میں پتنگ اڑانے کے علاوہ دیگر کھیل بھی شامل ہوتے گئے۔ جن میں رسہ کشی، دوڑ، نشانہ بازی وغیرہ شامل ہیں۔ کرکٹ کا مقابلہ بھی ہوا کرتا جس میں اساتذہ اور طلبہ کی ٹیمز حصہ لیتی تھیں اور طلبہ کا دل رکھنے کی خاطر اساتذہ مقابلہ ہار جایا کرتے تھے۔
یوں یہ جشن ایک باقاعدہ میلے کی صورت اختیار کرتا گیا، کرکٹ کے مقابلہ کے دوران رواں تبصرے کئے جاتے جس سے طلبہ کو زبان دانی اور تقریر کا فن سیکھنے میں مدد ملتی، طلبہ کے ساتھ ساتھ طالبات بھی اس ساری کاروائی میں بھرپور اور برابر کا حصہ لیتیں۔ میلے کیلئے اپنا اپنا اسٹال سجایا جاتا، جس میں طالبعلم ساجھے داری میں چھوٹی موٹی عارضی دوکان پیش کرتے۔ کہیں چاٹ چھولے مل رہے ہیں تو، کہیں مشروب، کوئی بریانی بیچ رہا ہے تو کوئی آئسکریم فروخت کرتا نظر آتا ہے، کسی نے سی ڈیز کا اسٹال لگا رکھا ہے تو کوئی بِنا سرمایہ کاری کے قسمت کا حال ہاتھ دیکھ کر بتا رہا ہے، کوئی ابّا کی پرانی بندوق اٹھا لایا ہے اور نشانہ بازی کروا رہا ہے تو کسی نے مِینا بازار کی کون مہندی سے طالبات سمیت خواتین اساتذہ کی ہتھیلیاں حنا سے سرخ کر دی ہیں۔ غرض ایک دیدنی منظر اور سماں تخلیق پاتا کہ آج بھی چشمِ تصور میں سب کچھ ایک متحرک فلم کی مانند قید ہے اور یہ سطور لکھتے ہوئے ہم خود کو مسز گلزار کے سونی سائیبرشاٹ کے محدب عدسے کے پیچھے محسوس کرتے ہیں۔
جاری ہے  

12 comments:

  1. sach sach batain sir ke students ka dil rakhnay ko haartay thay ya koshish ke bawajood bhi jeet nahi patay thay. waisay bara hi zabardast jashan e baharaan hota hoga. khushi ke sath afsos bhi hua ke humaray dor main kiun nahi hota tha.

    ReplyDelete
  2. Waaahhh Sir kia yaad dila diya...BTW 2004 ki Patang bananay mai mera haath bhi shaamil hai...;-)

    ReplyDelete
  3. kia baat hay bohat hi maza aa raha hay parhnay main

    ReplyDelete
  4. "کوئی ابّا کی پرانی بندوق اٹھا لایا ہے"
    its need a correction
    vo aba ki nai "dada" ki thee :P
    humee na istall lagaya thaa aur zindagi ki pehli kamee ki theee :D

    ReplyDelete
  5. wow sir its awesome!! although i haven't attended this function as i have passed out from matric and this is for college students but it gives a right picture of what we have seen!!!

    ReplyDelete
  6. everyything is a flashback on my mind after reading thiss..!! great effort sir!

    Anam Latif/Hasan

    ReplyDelete
  7. acha sir yeh bataye k Mrs. Gulzar hum alumni ko skool mein kion nahin aney deti thin..............hum tu larkian thi jin ko apney school sey muhabat thi.........
    hum masooomon ney tu yeh Jashn-e-baharan ki surat bhi nahin dekhi :(

    ReplyDelete
  8. wah sir ! kia khoob naqsha kheencha hai basant ka :Dbus aik cheez bhool gae aap...wo phoolon k gajron k stalls jo sec year k larke lagate the :P

    ReplyDelete
  9. Rimshaw Jalees AhmedSeptember 16, 2010 at 3:47 PM

    MY MY MY MY MY
    awesomeeeeeeeeeeeeee
    aik second k liey sub kuch waisa ka waisa samney agaya subbbb... maza aagaya... i wnt to go back to hamdard :(
    but madam gulzar ko rush pasand nai na :(

    ReplyDelete
  10. Hahahaha.. Gud point areEbA! Phoolön k gajre..kya khoOb yad dilaya! I thnk mustafa afridi ka stall hua krta tha woh wala..

    Blog boht hI unique n interesting laga..! Subse achi bt yeh lagI k 'teacher'z,..bAchoN ka dil rkhne k liye har jate thy' :)

    Ek boht hI imp point mje misSing laga yahan, woh yeh hai k colg k studEnts k lye to no doubt its was a rocking event..! Bt break time me schoOl k studEnts puray stadium k gird jama hoke jis hairat se ye event dkhte thy unke expResSioN'z me bhul nae skti.. They wishd unka b koi aisa event organize hota!

    Namrah

    ReplyDelete
  11. wow sir basant tu hum ne enjoy nahinki, par aap ki writing e kaafi h :) barhaal mujhay student week zaror yaad h jis me aksarhumlog mehndi lagatay the students k b n teachers k b :D

    ReplyDelete
  12. ohh yeah i agree with namrah !!
    we never attend this event but hamen jab pata chalta tha k school main basant mela lagna hai to ham us din zyada paisey le kar aatey thai so that we can buy things in break or poori break stadium main sab ko dekhte rehte thai!! : )

    ReplyDelete