Sunday, February 13, 2011

کیا منائیں کیا چھوڑیں


اب کے برس تو عجب مشکل آن پڑی ہے کہ کس کوراضی کریں اور کس کو ناراض۔ ایک طرف چھوٹی بڑی عید کے ساتھ تیسری عید ہے اور دوسری جانب ایک بین الاقوامی تہوار، مذہب سے روگردانی کریں یا انتہا پسندی کا ثبوت دیں۔موسم بہار کا استقبال کریں یا بچوں کے اسکول کی دو ماہ کی فیس کا انتظام کریں کہ اس بار موسم سرما کی تعطیلات کی فیس فروری اور مارچ کی فیس کے ساتھ جانی ہے۔اگربیگم کوویلنٹائن کا تحفہ نہیں دیتے تو وہ ناراض اور اگرمذہبی رسومات پوری نہیں کرتے تو محبانِ دین سے کفر کے فتاوی کیلیئے تیار رہنا پڑتا ہے-جشنِ بہاراں نہیں مناتے تو بدذوقی کا طعنہ ملتا ہے اور اسکول کی فیس کی عدم ادائگی کی صورت میں بیگم اور اولاد دونوں کے سامنے جوابدہ ہونا پڑتا ہے۔
اب یہ تو زیادتی ہی ہوگی نا کہ ہم ان ایّام کو گنوا دیں سال میں ایک ہی تو موقع آتا ہے اپنی محبت دکھانے کا،چاہے وہ وطن سے ہو، ماں باپ سے، محبوبہ سے یا اپنے دین سے۔ کس قدر آسانی کی بات ہے کہ یہ ایّام مختص کر دیئے گئے ہیں اور ان کے نام رکھ چھوڑے ہیں کہ آج فلاں دن منایا جائے گا، کل وہ تہوار تھا اور آج یہ ہے، وطنِ عزیز کی آزادی منا لیں کہ آج چودہ اگست ٹھہری، جھنڈا لگایا اور ترانہ پڑھ کے فارغ۔باقی سال کے تین سو چونسٹھ دنوں میں وطن کی بچیوں سے ہی پیار جتاتے رہے ایک دن وطن کےلئے بہت ہے۔
اسکولوں میں تو دن منا منا کر بچوں کا یہ حال ہو جاتا ہے کہ وہ بیچارے یہ سمجھنے لگتے ہیں کہ سال کے تمام دن رُوٹھے رہتے ہیں لہٰذا ان کا منا لینا ضروری ہے۔کبھی لال لباس اور کبھی سبز ،کسی دن ایک بچی کو پری بنا دیا جاتا ہے تو کبھی سنڈریلا۔
حُب یا محبت کے تقاضے ہوتے ہیں اور اگر دعوی عشق کا ہو تو پھر معشوق ہی دکھائی دیتا ہے اپنا آپ نہیں رہتا، صرف ایک دن منا لینے سے نہ تو ہم سچے عاشق بن سکتے ہیں اور نہ ہی دین و دنیا بہتر کر سکتے ہیں البتہ جن کی رسومات اختیار کرتے ہیں ہمارا حشر ضرور ان کے ساتھ ہوگا۔ محض تقلید اور وہ بھی اندھی ہمیں قطعی معتبر نہیں کر سکتی جب تک کہ ہم اپنے عمل کی اصل وجہ یا رسم کی صحیح حیثیت سے واقف نہ ہوں۔ ہمیں کسی کی پسند نا پسند پر تو کچھ کہنے کا حق نہیں لیکن ہمارے جیسوں کا حال اس شعر میں سمٹا ہوا ہےکہ
یامانا کہ میں پورا مسلماں تو نہیں ہوں
رشتہ اپنے دین سے تو جوڑ سکتا ہوں
حج، روزہ، نماز ،زکوۃ کچھ نہ سہی
شبِ برات اک پٹاخہ تو پھوڑ سکتا ہوں

12 comments:

  1. bohat khoob. jo bhi likh hay woh bilkul sahi likha hay aur bohat say logon k khayalat ki akasi kardi hay .main bhi hamesha yehi kehta hoon k aik din kion makhsoos.
    Fathers day, mother day to woh manatay hain k jo us aik din ko hi father say milnay jatay hain aur baqi saal us ko akeela chor detay hain.
    14 augast ko independence day banaya aur sara saal pakistan ko bura bhala kehtay rahay k is mulk main rakha kia hay .
    5 wakt ki namaz ka pata nahi raat ko eid millad-un-Nabi (PEace Be Upon HIm)manwa lo bas.aray mohabbat ka matlab to yeh hay k tum Muhammad (Peace Be Upon Him) k aihkamat ko mana aur apni zindagi un ki batai hoi zindagi main dhalo.

    waisay sir fees jaldi bhar di ga nahi to .....:D

    ReplyDelete
  2. Bohat khoob Sir kuch karwa such likha diya hai aap nay...
    Ishq-e-Rasool(S.a.W) mai bajaye is kay kay hum loag Aap(S.A.W) k bataye hue raastay per amal karai hum Road k ooper Haray jhanday laga kar chori ki bijli say shehar roshan kar kai dhamaalain daal kar jashn manatay hain aur agar koi kuch keh kar dekhai tu us ko foran kafir keh diya jata hai.

    ReplyDelete
  3. Bhooth Khoob, loved the way you ended this essay, apnay asaal baat ko jiss tarhan nichoor kay akhir mein likha hai uski tareef tu koi kiyay bina reh na sakay ga.
    plus I agree with Hasan, Ishq-e-rasool ko bhee politcize kerdia giya hai, haar koi apna alag hee mazhab bana rha hai, na deen kay rhay hum na duniya kay.

    ReplyDelete
  4. Snow White sleeps with 7 men, Tarzan is half naked, Cinderella comes home after midnight, Pinocchio always lies, Aladdin is the king of thieves, Batman drives 200 mph, That's what they teach us as kids... no wonder we're screwed...

    ReplyDelete
  5. Awesome sir!
    bohat aala baat ki aap ne.
    & I agree to Ahsen's point!

    ReplyDelete
  6. bilkul durast farmaya aap ne sir.

    ReplyDelete
  7. لگتا ہے۔ کہ ہماری زندگی ادھوری اور محبت پوری نہیں ہے۔ اسے آپ نے خوب بیان کیا ہے۔

    ReplyDelete
  8. inspiring n impressive! Ayaz bohat khoobsoorti se akkasi ki jazbo ki aap ne ha dukhti rug pakri ha aap ne bohat nifasat se. likhte raho yeh b jihaad ha qalam ka jo dil me uterta ha aur asar rukhta ha

    ReplyDelete
  9. beautifully manifested Ayaz. keep writing n motivating people to love little but love long

    ReplyDelete
  10. Beautiful depiction of our reality. We are crushed between the two extremes.

    ReplyDelete