Wednesday, August 31, 2011

سر مُنڈاتے ہی

مسلسل دو برس دیارِغیر میں گزارنے کے بعد جب بندہ وطن آتا ہے تو وطن کےلوگوں سے لے کر آب وگیا تک سب خوبصورت و حسین لگتے ہیں مگر آہستہ آہستہ حقیقت کھلنے لگتی ہے اور یہ ادراک ہوتا ہے کہ'خوب تھا کہ جو دیکھا، جو سنا افسانہ تھا'۔ قصہ کچھ یوں ہوا کہ چند دن پہلے ہم ایک قدرے نئی انٹرنیٹ سروس پروائیڈر کے ہتھے چڑھ گئے اور قریب کی ایک دوکان سے وائی فاوئی ڈیوائیس  خرید لی۔ بتایا گیا کہ دو گھنٹوں میں انٹرینیٹ سروس شروع ہو جائے گی اور ہم آن لائن ہوسکیں گےمگر صاحب پورے تیس گھنٹوں اور سات عدد موبائل کالز کہ جو اس کمپنی کو کی گئی تھیں کے بعد یہ عقدہ کھلا کہ جو  ڈیوائیس ہمیں وائی فائی کے نام پر بیچی گئی تھی وہ در حقیقت ایک ڈیسک ٹاپ ڈیوائیس تھی اور دکاندار نے ہمیں کراچی کی زبان میں چونا لگایا تھا۔ ایک تو رمضان، دوسرے ہمارا مسلمان ہونا اور تیسرے پاکستانی اور وہ بھی ایسا پاکستانی کہ جو ابھی ابھی گوروں کے دیس سے دو برس بعد لوٹا ہو ہم پر ایک ایک کر کے اس طرح منکشف ہوئے جیسے پڑوسی ملک کے چینلز پر چلنے والے ڈراموں کے دوران صوتی اثرات اور موسیقی کی ترتیب۔ غصہ شاید نہایت چھوٹا لفظ ہے جو ہماری دلی کیفیات کی ترجمانی کر سکے۔ وہ ڈیوائیس دوکاندار کو شکریہ کے ساتھ واپس کی اور الگے دن  اسی کمپنی کے ایک سیل سینٹر جا نکلے کہ ہمیں بھی ضد ہو چلی تھی کہ اسی کمپنی کا نیٹ استعمال کرنا ہے وہاں جاکر اپنی دکھ بھری ببتا سنائی کہ ہم دودھ کے جلے ہیں مگر چھاچھ پینا چاہتے ہیں اور امید کرتے ہیں کہ پھونک مارنے کی نوبت نہیں آئے گی، ہماری داستان سن کےوہاں موجود حسینہ قدرے شرمندہ ہوئیں اور ہمیں دلاسہ دیا کہ وہ یہ نوبت نہیں آنے دیں گی، مگر اساتذہ نے سچ کہا ہے کہ حسینوں کے وعدوں کا اعتبار نہیں کرنا چاہیئے۔ ہم ان سے مطلوبہ ڈیوائیس اور ان کی بات پر ایمان بھی لے آئے مگر انٹرنیٹ سروس کے چالو ہونے کے لیئے ہمیں آٹھ گھنٹے انتظار کرنا پڑا اور وہ بھی دو عدد مابائل کی کالز کے خرچہ پر تب کہیں جاکر ہم اس قابل ہوئے کہ یہ سطور آپ تک پہنچا سکیں۔
اب آپ ہی بتائیے کہ کیا اس پورے واقع میں شامل افراد کے اس طرح کے 'حسنِ سلوک' کے ذمہ دار ہمارے ملک کے سیاستدان ہیں یا ہم بحیثیت قوم ہی وعدہ خلافی، دھوکا دہی اور غلط بیانی میں مبتلا ہو چکے ہیں اور یہ زحمت بھی گوارا نہیں کرتے کہ خود کو سدھار لیں یا کم از کم اپنے کئے پر شرمندہ ہی ہو جائیں۔  

8 comments:

  1. Bas Janabkia kahain ab. jhoot hay asal jar har baat ki yahan, sab aik dosre ko laan taan karte hain par koi apnay gireban mian nahi jhankta.
    Agar har koi sirf apna app sudhar le to sara muashra hi na sudhar jay .

    ReplyDelete
  2. aap jang akhbar ki tarah naam yun chupa gai company ka?

    ReplyDelete
  3. Sir ji asaan hal ye hota he k ap kisi "KARACHI Walay" se help lete :) takay wo ap ko CHOONA lagnay se bacha leta!!! Plz company ka naam b bta den takay hum ghareeb logon ka kuch bhala ho skay

    ReplyDelete
  4. Sir aap ko aisay experiences kai liye taiyaar reha chaiyee tha....I know, no any institution (Service Providing) in Pak filled with dodgy people.

    ReplyDelete
  5. Sir aap service provider ka naam to mention ker detay. doosron ka bhi bhala hojata.
    Anyways Eid Mubarak to you and your family.

    ReplyDelete
  6. sir agar ye aap kai saath nahee hota to phir aap ko pata kaisay chalta kai aap Pakistan aa gaye hain.....:)

    ReplyDelete
  7. sara qusoor app k australia trip ka hai... app yahien k aadi hotey tou itna ghusa na aata,, aam si baat lagti :-D

    ReplyDelete
  8. مجھے اندازہ ہے آپ کس جگہ پھنسے ہوں گے۔ خیر! ان چیزوں کی عادت ڈالیئے، اس قوم کو ٹھیک کرنا اتنا آسان نہیں ہے۔

    ReplyDelete